14

حکومت تجرباتی بنیادوں پر ملک کو چلا رہی ہے : سراج الحق

مٹھی ( جاوید بجیر . رپورٹر ) جماعت اسلامی پاکستان کے امیر سینیٹر سراج الحق نے کہا ہے کہ موجودہ حکومت تجرباتی بنیادوں پر ملک کو چلا رہی ہے۔

جسے پانچ سال سیکھنے میں لگ جائیں گے۔اس وقت حکومت کی کارکردگی ہے ہی نہیں تو اس پہ کیا بات کریں پانچ سال بعد اس ملک کا کیا حشر ہو گا اللہ ہی جانے۔

انڈیا کی جانب سے جو چئلیجز در پیش ہیں ان سے اچھی طرح نمٹ رہے ہیں۔ملک کے اندر اگرصحیح احتساب ہو تو ایوانوں میں موجود اکثریت لوگوں کی جیلوں میں ملے گی۔۔

ان خیالات کا اظہار انہوں نے مٹھی میں 50 بستروں پر مشتمل الخدمت ہسپتال کی افتتاحی تقریب سے خطاب کے دوران کیا۔مزید کہنا تھا کہ الخدمت نے تھر کے عوام کے لیئے عظیم الشان ہسپتال تعمیر کیا ہے۔

پسماندہ علاقے میں اتنا بڑا صحت مرکز غریب عوام کے لیئے بڑا تحفہ ہے۔اس خطے میں آکر وزراء اعلی اور وزیر اعظم نے بھی بہت اعلانات کئے لیکن الخدمت نے عملی طور وہ کام کر دکھایا جو ان کی صلاحیت سے بہت بڑا ہے۔آج تھر کےمریضوں کے چہروں پر بڑا اعتماد نظر آیا اور خوشی ہوئی۔

تھر میں پانی خوارک کے بڑے مسائل ہیں۔اس ہسپتال میں 100 فیصد علاج مفت ہے۔یہ پروجکیٹ پورے ملک کے فلاحی منصوبوں میں سے اپنی مثال آپ ہے۔

جماعت اسلامی سیاست سے بالاتر ہو کر عوام کی خدمت کر رہی ہے۔کیونکہ ہم انسانیت کی خدمت پر یقین رکھتے ہیں۔اس ریگستان میں لوگوں کی خدمت جذبے کے بغیر ممکن نہیں۔

دیگر لوگ سوچتے ہیں اور ہمارے رضاکار کر کر دکھاتے ہیں۔ملکی سیاست پر بات کرتے ہوئے سینیٹر سراج الحق نے مزید کہا کہ موجودہ حکومت تجرباتی بنیادوں پر ملک کو چلا رہی ہے۔اس وقت حکومت کی کارکردگی ہے ہی نہیں تو اس پہ کیا بات کریں پانچ سال بعد اس ملک کا کیا حشر ہو گا اللہ ہی جانے۔انڈیا کی جانب سے جو چئلیجز در پیش ہیں ان سے اچھی طرح نمٹ رہے ہیں۔

ملک کے اندر اگرصحیح احتساب ہو تو ایوانوں میں موجود اکثریت لوگوں کی جیلوں میں ملے گی۔مزید کہنا تھا کہ مستقبل کا ایک روشن تھر دیکھ رہا ہوں،یہاں لوگ کمانے آئیں گے۔اللہ نے تھر کو جن خزانو سے نوازا ہے شاید آپ ہی کے لیئے یہ خزانے رکھے تھے۔تھر کے لوگ با صلاحیت ہیں۔جہاں مسلمان ہندو کمیونٹی امن سے رہتی ہیں۔کسی نے اخلاق سیکھنا ہو تو صحراء کا رخ کرے۔جہاں پانی نہیں ہے مگر محبتوں کے چشمے موجود ہیں۔اگر حکومت چاھے تو ملک کے 22 کروڑ عوام کو مفت صحت کی سہولیات دے سکتی ہے۔

آئین میں موجود ہے کہ عوام کو صحت سمیت بنیادی سہولیات دینا حکومت کہ ذمہ داری یے مگر ہمارے حکمران اندھے بہرے ہیں۔میں اعلان کرتا ہوں کے ہمیں موقعہ ملا تو ہمارے پاکستان میں کوئی بچہ بھوکا نہیں سوئے گا۔حکومت و ریاست کا تصور ٹیکس جمع کرنا نہیں بلکہ ایک ماں کی طرح ہے ۔

مگر ہمارے ہاں مسئلہ الٹا ہے جو بچہ طاقتور ہو اسے ریاست یعنی ماں دودھ دیتی ہے کمزور چیختا رہتا ہے۔ہماری لڑائی کسی پارٹی فرد سے نہیں بلکہ ظالمانہ نظام کے ساتھ ہے۔کیونکہ انقلاب تبدیلی صرف اللہ کے نظام میں ہے۔

اس سے قبل انہوں نے الخدمت اسپتال کے تمام وارڈز کا وزٹ کیا اور عملے سے ملاقات کی ساتھ ہی الخدمت موبائل میڈیکل یونٹ کا بھی افتتاح کیا۔اسی موقعی پر جماعت اسلامی سندھ کے امیر محمد حسین محنتی،معراج الہدی صدیقی،مولانا اسد اللہ بھٹو ،الخدمت پاکستان کے صدر عبدالشکور،اعجاز اللہ خان،جماعت اسلامی تھر کے امیر میر محمد بلیدی،عبدالسبحان سمیجو اور دیگر نے بھی خطاب کیا۔

اس خبر پر اپنی رائے کا اظہار کریں

اپنا تبصرہ بھیجیں