سانحہ چکسواری روپیال میرج ہال کے زمین بوس ہونے کی وجوہات جاننے کے لیے ضلعی ایڈمنسٹریشن کی طرف سے تحقیقاتی کمیٹی بنائی گئی

( سٹی کرائم رپورٹر محمد حسن رضا)

سانحہ چکسواری روپیال میرج ہال کے زمین بوس ہونے کی وجوہات جاننے کے لیے ضلعی ایڈمنسٹریشن کی طرف سے بنائی گئی تحقیقاتی کمیٹی کے چیئرمین و ناظم پبلک ہیلتھ انجینئرنگ و سٹریکچرل انجینئر تنویر احمد قریشی نے بتایا کہ روپیال میرج ہال چکسواری کی بلڈنگ زمین بوس ہونے کی وجوہات میں سب سے بڑی وجہ عمارت کا سٹریکچرل ڈیزائن کانہ ہونا اور دوسرا بلڈنگ میں بغیر کسی سٹریکچرل انجینئر کی مشاورت سے مرمتی کا کام ہونا اور ساتھ ہیRCC دیوار کو توڑکر راستہ بنانا تھا بلڈنگ میں دھماکہ ہونے کا کوئی بھی عنصر نہیں پایا گیا۔
ان خیالات کا اظہار انھوں نے یہاں ڈپٹی کمشنر آفس میں میڈیا بریفنگ دیتے ہوئے کیا اس موقع پر ایکسین بلڈنگ سٹریکچرل انجینئر شہزادہ اورنگزیب اور اسسٹنٹ کمشنر منیر احمد قریشی بھی موجود تھے۔ ناظم پبلک ہیلتھ انجینئرنگ و سٹریکچرل انجینئر تنویر احمد قریشی نے بتایا کہ ضلعی انتظامیہ کی طرف سے سانحہ روپیال میرج ہال کے گرنے کی وجوہات جاننے کے لیے 8رکنی کمیٹی بنائی گئی تھی۔کمیٹی نے روپیال میرج ہال کے آرکیٹیکٹ محمد ریاض آف گجرات اور ٹھیکیدار بوٹا کو سماعت کیا جس کے بعد موقع پر جاکر تباہ شدہ عمارت کا جائزہ لیا گیا انھوں نے بتایا کہ چار منزلہ میرج ہال بناتے وقت ابتدائی فاؤنڈیشن کی بنیادیں انتہائی کمزور رکھی گئی ا سطرح بلڈنگ کی ہر چھت پر 8انچ سے 1فٹ تک مٹی وغیرہ ڈالی گئی تھی۔پہلے فلور میں چاولوں کا سٹاک بھی رکھا گیا تھا دوران مرمتی میرج ہال میں مختلف تعمیراتی/مرمتی کے کام جاری تھے جن میں ہیوی سیلنگ سمیت RCCدیوارکو ہلٹی سے توڑا گیا انھوں نے بتایا کہ ادارہ ترقیات اور میونسپل کارپوریشن میں نان ٹیکنیکل لوگ نقشہ جات پاس کر رہے ہیں جس کے باعث اس طرح کے واقعات رونما ہونے کے مزید خدشات موجود ہیں انھوں نے حکومت کو تجویز دی کہ ضلع میرپور میں 3یا اس سے زائد منزلہ نان ڈیزائن شدہ عمارات کا فوری طور پر سٹریکچرل انجینئر سے سرو ے کروایا جائے تاکہ ان عمارات کے بارے میں معلومات حاصل ہوسکیں کہ یہ عمارات قابل استعمال ہیں یا نہیں۔انھوں نے مزید کہا کہ گزشتہ سال آنے والے زلزلوں کے باعث یہاں مسقبل میں بننے والی عمارات کی تعمیر بلڈنگ کوڈز کے مطابق زلزلہ پروف ہونی چائیے:سانحہ روپیال انکوائری کمیٹی نے رپورٹ مکمل کر لی!
بلڈنگ کے ساتھ بغیر منصوبہ بندی چھیڑ چھاڑ اور اضافی لوڈ ڈالا گیا جو حادثے کا سبب بنا ،ہلٹی سے ایک ماہ کام کیا گیا

بلڈنگ میں رمضان المبارک سے حادثے تک مختلف تعمیراتی/مرمتی کام جاری تھا
بیس منٹ میں آر سی سی وال کو توڑا گیا
تاکہ سامان کو بیسمنٹ تک پہنچایا جاے
جملہ کام میں کسی ٹیکنکل شخص کو شامل نہیں کیا گیا ہر چھت پر آٹھ انچ سے دس انچ تک مٹی اور گیڑا تھا جس کو پانی لگایا جاتا رہا جس سے چھت پر وزن پڑا ایسا تب کیا جاتا ہے جب انجینرنگ نے پاس کیا ہو
اسٹرکچر کے ساتھ چھیڑ خوانی کی جاتی رہی مگر کوئی پیمانہ نہیں رکھا گیا
بلڈنگ ان ڈیزائن بنائی گئی ،ریاض نامی شخص آرکٹیکٹ کا کلاسیفائیڈ انجینئر کا ثبوت نہیں ملا ٹوٹل کام ٹھیکیدار بوٹا کرتا رہا جو پلر گیا اس میں محض چھ سے آٹھ سرائیے ڈالے گئے
بنیادیں محض دو سے تین فٹ رکھی گئی تھی ،بلڈنگ کسی قسم کی ڈیزائن کے بغیر بنائی گئی ،موقع پر آٹھ سے دس قسم کے کام کر رہے تھے
ادارہ ترقیات اور بلدیہ والوں نے دوکانداری مچا رکھی ہے لوگ کڑوڑوں روپے لگا کر بناتے ہیں مگر انجینرز کو شامل نہیں رکھتے
بلڈنگ کوڈنگ پر عمل نہ ہوا تو مستقبل میں ایسے مزید سانحات ہو سکتے ہیں
بلڈنگ میں کسی قسم کا دھماکہ نہیں ہوا اس کے کوئی ثبوت نہیں ملے
بلڈنگ کمزور تھی اس کے اسٹرکچر کے ساتھ بہت زیادہ چھیڑ چھاڑ کی گئی
ٹوٹا ہوے بیم کو ایک پانی کے پائپ سے سہارا دیا گیا
آر سی سی وال کو توڑنا حادثے کی وجہ بنی

متعلقہ لوگ چھ ماہ کے اندر شہر میں تین اور اس سے زاہد عمارتوں کو فوری طور پر چیک کیا جاے بلڈنگز میں بلڈنگ کوڈنگ پر عمل نہیں ہوا ایم ڈی اے اور بلدیہ میں پچانوے فی صد لوگ عطائی ہیں پیسے لیکر نقشے پاس ہو رہے ہیں
سانحہ روپیال کی انکوائری کمیٹی ایس ای تنویر قریشی ،اسسٹنٹ کمشنر منیر قریشی اور انجینر شہزادہ کی پریس بریفننگ


یہ خبر ( سٹی کرائم رپورٹر محمد حسن رضا) نے ارسال کی

نیوز ڈیسک

ای این این ٹی وی کا نیوز ڈیسک نمائندگان کی خبروں کے ساتھ ساتھ دنیا بھر میں رونما ہونے والے واقعات کو اپنی قارئین کے لیے اپنی ویب سائٹ پر شائع کرتا ہے۔

جواب دیں

آپ کا ای میل ایڈریس شائع نہیں کیا جائے گا۔ ضروری خانوں کو * سے نشان زد کیا گیا ہے

Next Post

شمس الحسن - ای این این نمائندہ کی نیوز رپورٹ

منگل اگست 11 , 2020
(شمس الحسن – ای این این نمائندہ) ممبر پنجاب اسمبلی پی پی 19 عمار صدیق خان ، ممبر پنجاب اسمبلی پی پی 20 و پارلیمانی سیکرٹری ملک تیمور مسعود اکبر نے ٹائیگر فورس کی جانب سے شجر کاری مہم میں شرکت کی ۔ ممبران پنجاب اسمبلی و اسسٹنٹ کمشنر ٹیکسلا […]

کیلنڈر

اکتوبر 2020
پیر منگل بدھ جمعرات جمعہ ہفتہ اتوار
 1234
567891011
12131415161718
19202122232425
262728293031  
%d bloggers like this: