شمالی کوریا کی معمولی کوتاہی بڑی تباہی کا سبب بن سکتی ہے: مون چنگ اِن

شمالی کوریا کی طرف سے کوئی ممکنہ راکٹ حملہ، ملک کے جوہری پروگرام کے بارے میں جاری ڈپلومیسی کے لئے تباہی ثابت ہو سکتا ہے: مون چنگ اِن
جنوبی کوریا نے کہا ہے کہ شمالی کوریا کی طرف سے کوئی ممکنہ راکٹ حملہ، ملک کے جوہری پروگرام کے بارے میں جاری ڈپلومیسی کے لئے تباہی ثابت ہو سکتا ہے۔

جنوبی کوریا کے صدر مون جائے اِن کے قومی سلامتی کے مشیر مون چنگ اِن نے ایک کھلی نشست سے خطاب میں کہا ہے کہ شمالی کوریا کا امریکہ کے ساتھ جاری مذاکرات میں میزائل کے موضوع کو ہتھکنڈے کے طور پر استعمال کرنا ایک بُری ترجیح ہوگا اور اگر شمالی کوریا کی طرف سے کوئی راکٹ حملہ کیا گیا تو یہ پیانگ یانگ جوہری پروگرام سے متعلق جاری گلوبل ڈپلومیسی کے حوالے سے ایک تباہی ثابت ہو گا۔

پیانگ یانگ انتظامیہ کے اس نوعیت کے عامیانہ اور بُرے روّیے سے پرہیز کرنے کی ضرورت پر زور دیتے ہوئے مون نے کہا ہے کہ کوئی ممکنہ معمولی واقعہ اپنے ساتھ بہت بڑی تباہی لا سکتا ہے۔

انہوں نے کہا ہےکہ ویتنام کے دارالحکومت ہنوئی میں منعقدہ سربراہی اجلاس نے ثابت کر دیا ہے کہ کوریا جزیرہ نما میں جوہری اسلحے کا خاتمہ کس قدر دشوار ہے۔ اس اجلاس کے ناکام رہنے کی ذمہ داری شمالی کوریا پر بھی ہے اور امریکہ پر بھی۔

واضح رہے کہ ہنوئی میں 27سے 28 فروری کو امریکہ کے صدر ڈونلڈ ٹرمپ اور شمالی کوریا کے لیڈر کِم جونگ اُن کے درمیان مذاکرات میں کچھ پیش رفتیں ہوئیں لیکن یہ پیش رفتیں سمجھوتہ طے پا سکنے کی حد تک نہیں پہنچ سکی تھیں۔

نیوز ڈیسک

ای این این ٹی وی کا نیوز ڈیسک نمائندگان کی خبروں کے ساتھ ساتھ دنیا بھر میں رونما ہونے والے واقعات کو اپنی قارئین کے لیے اپنی ویب سائٹ پر شائع کرتا ہے۔

جواب دیں

آپ کا ای میل ایڈریس شائع نہیں کیا جائے گا۔ ضروری خانوں کو * سے نشان زد کیا گیا ہے

Next Post

شمالی عراق پر ترک فضائیہ کی کاروائی،دہشتگردوں کے متعدد ٹھکانے تباہ

بدھ مارچ 13 , 2019
شمالی عراق کے علاقے زاپ پر ترک فضائیہ کے حملے میں علیحدگی پسند دہشتگرد تنظیم پی کےکے کے اسلحے کے گوداموں اور پناہ گاہوں کو تباہ کر دیا ۔ ترک محکمہ دفاع نے اس کاروائی کی اطلاع ٹویٹر پر دی ہے ۔ کاروائی کے بعد ترک طیارے بحفاظت اپنے اڈے […]

کیلنڈر

دسمبر 2020
پیر منگل بدھ جمعرات جمعہ ہفتہ اتوار
 123456
78910111213
14151617181920
21222324252627
28293031  
%d bloggers like this: