بابری مسجد تنازعہ کے حل کے لئے قائم کمیٹی تنازعہ کا شکار

بھارتی سپریم کورٹ نے ستر برس پرانے بابری مسجد اور رام مندر اراضی کے معاملے کے پرامن حل کی جانب قدم بڑھاتے ہوئے آج آٹھ مارچ کو ثالثی کمیٹی مقرر کردی۔ تاہم یہ ثالثی کمیٹی بھی تنازعہ کا شکار ہوگئی۔

بھارتی سپریم کورٹ نے آج عدالت عظمیٰ کے سابق جج فقیر محمد ابراہیم خلیف اللہ کی صدارت میں تین رکنی ثالثی کمیٹی کا اعلان کیا اور اس کمیٹی کو آئندہ آٹھ ہفتے کے اندر مصالحت کی کارروائی مکمل کرنے کا حکم دیا۔ کمیٹی کے دیگر اراکین میں سماجی کارکن اور ’آر ٹ آف لیونگ‘ کے بانی شری شری روی شنکر اور سینئر وکیل شر ی رام پانچو شامل ہیں۔
سپریم کورٹ کے چیف جسٹس رنجن گوگوئی کی صدارت والی پانچ رکنی آئینی بینچ نے یہ کہا کہ ’’ہمیں اس مسئلے کے حل کے لئے ثالثی کا راستہ اپنانے میں کوئی قانونی رکاوٹ نظر نہیں آتی۔‘‘ آئینی بینچ نے یہ بھی واضح کیا کہ ثالثی کمیٹی میں حسبِ ضرورت مزید افراد کو شامل کیا جاسکتا ہے اور یہ کمیٹی قانونی مدد بھی لے سکتی ہے۔ عدالت عظمیٰ نے تاہم یہ ہدایت دی کہ معاملے کی حساسیت کے مدِنظر بات چیت کا پورا عمل بند کمرے میں ہوگا اور اس کی میڈیا رپورٹنگ پر مکمل پابندی عائد رہے گی۔ خیال رہے کہ دو روز قبل سپریم کورٹ نے ثالثی کے معاملے پر سماعت مکمل کرنے کے بعد اپنا فیصلہ محفوظ کیا تھا۔

بابری مسجد تنازعہ کے اہم فریق آل انڈیا مسلم پرسنل لا بورڈ کے رکن اور بابری مسجد ایکشن کمیٹی کے کنوینر ظفریاب جیلانی نے سپریم کورٹ کے آج کے فیصلے کو خوش آئند قرار دیا۔ انہوں نے میڈیا سے بات چیت کرتے ہوئے کہا ’’ہم نے پہلے ہی کہا تھا کہ اگر مصالحت کی کوشش ہوتی ہے تو ہم اس میں تعاون کریں گے۔ لہٰذا اب جو بھی کہنا ہے وہ مصالحت کے لئے تشکیل شدہ پینل میں کہیں گے۔‘‘ اس معاملے کے ایک ہندو فریق نرموہی اکھاڑہ کے مہنت رام داس نے بھی فیصلے پر خوشی اظہار کرتے ہوئے کہا ’’ ہم خوش ہیں کہ عدالت بھی اس مسئلے کاحل تلاش کرنا چاہتی ہے۔ ہم چاہتے ہیں کہ مصالحت کا عمل آج سے ہی شروع ہوجائے۔‘‘

دوسری جانب بھارتیہ جنتا پارٹی کے سینئر رہنما اور ممبر پارلیمان سبرامنیم کے خیال میں بھارت کے مسلمان شہریوں کے لئے یہ ثابت کرنے کا ایک نایاب موقع ہے کہ وہ دنیا کے دیگر حصوں میں رہنے والے مسلمانوں سے مختلف ہیں۔

شری شر ی روی شنکر کی ثالثی کمیٹی میں شمولیت پر اعتراض
ثالثی کمیٹی میں ’آرٹ آف لیونگ‘ کے بانی شری شر ی روی شنکر کی شمولیت پر متعدد حلقوں کی جانب سے اعتراضات بھی سامنے آئے ہیں۔ آل انڈیا مجلس اتحاد المسلمین کے سربراہ اورممبر پارلیمنٹ اسد الدین اویسی کے مطابق بہتر ہوتا کہ کمیٹی میں غیر جانبدار افراد شامل کیے جاتے۔ ان کے بقول، ’’شری شری روی شنکر پہلے ہی کہہ چکے ہیں کہ اگر مسلمان ایودھیا میں اپنا دعویٰ نہیں چھوڑیں گے تو بھارت بھی شام بن جائے گا۔‘‘ اسد الدین اویسی نے مزید کہا کہ وہ امید کرتے ہیں کہ روی شنکر اپنے ماضی کے بیانات سے خود کو الگ کرکے نئے سرے سے کام کریں گے۔


دہلی میں تاریخی جامع مسجد کے امام سید احمد بخاری نے ثالثی کمیٹی سے روی شنکر کا نام خارج کرنے کا مطالبہ کرتے ہوئے کہا کہ روی شنکر بابری مسجد کی جگہ صرف رام مندر کی تعمیر چاہتے ہیں اور وہ مسلمانوں سے کہہ چکے ہیں کہ اپنی مسجد ایودھیا سے باہر تعمیر کریں۔

’مصالحت کے لئے موزوں وقت نہیں‘

ثالثی کمیٹی کی تشکیل پر سماجی تجزیہ کار اور دہلی یونیورسٹی میں پروفیسر اپوروا نند نے ڈی ڈبلیو اردو سے بات چیت کرتے ہوئے کہا کہ مصالحت بہت ہی اچھی چیز ہے، مصالحت ہونی چاہیے لیکن اس کے لیے ابھی ماحول مناسب نہیں۔ ان کے مطابق اگلے چند ہفتوں کے دوران ملک میں عا م انتخابات کی سرگرمیاں عروج پر رہیں گی اور اس سے قبل قومی سلامتی کا شور بھی بلند کیا جا چکا ہے۔ اپوروا نند کے بقول، اسی تناظر میں ملک میں مسلمانوں پر زبردست دباؤ ہے اور ایسے حالات میں آرام سے مصالحت کی بات ہونا ہی مشتبہ ہے۔

تجزیہ کاروں کا کہنا ہے کہ انتخابی ماحول میں مصالحت کی اس کوشش کا مکمل فائدہ حکمران جماعت بھارتیہ جنتا پارٹی کو ہوگا، جو دوسری مرتبہ اقتدار میں آنے کی کوشش کر رہی ہے۔ اگر فیصلہ ہندوؤں کے حق میں گیا تو ’بی جے پی‘ یہ دعویٰ کرے گی کہ اس نے اپنا ایک اہم انتخابی وعدہ اور ہندو شہریوں کا دیرینہ مطالبہ پورا کردیا۔ بی جے پی کی مخالف سیاسی جماعتوں کے لئے اس کا مقابلہ کرنا بہت مشکل ہوگا۔
خیال رہے کہ ایودھیا میں تقریباﹰ پانچ سو برس پرانی بابری مسجد کو چھ دسمبر 1992ء کو ہندو انتہاپسندوں کے ایک ہجوم نے منہدم کردیا تھا۔ ہندو تنظیمیں منہدم بابری مسجد کی جگہ رام مندر کی تعمیر کی مسلسل کوشش کر رہی ہیں۔ ان کا دعویٰ ہے کہ بھگوان رام اس مقام پر پیدا ہوئے تھے اور وہاں مندر توڑ کر 1528ء میں بابری مسجد تعمیر کی گئی تھی۔

نیوز ڈیسک

ای این این ٹی وی کا نیوز ڈیسک نمائندگان کی خبروں کے ساتھ ساتھ دنیا بھر میں رونما ہونے والے واقعات کو اپنی قارئین کے لیے اپنی ویب سائٹ پر شائع کرتا ہے۔

جواب دیں

آپ کا ای میل ایڈریس شائع نہیں کیا جائے گا۔ ضروری خانوں کو * سے نشان زد کیا گیا ہے

Next Post

برطانیہ: بریگزٹ عمل میں تاخیرقبول کرلی گئی

ہفتہ مارچ 9 , 2019
بتایا گیا ہے کہ برطانوی وزیر اعظم تھریزا مے کے اس منصوبے کے حق میں 502 جبکہ اس کے خلاف صرف 20 ووٹ پڑے برطانوی پارلیمان کے ایوان زیریں نے بریگزٹ کے عمل میں تاخیر کے حق میں ووٹ دیا ہے۔ برطانوی وزیر اعظم تھریزا مے کے اس منصوبے کے […]

کیلنڈر

دسمبر 2020
پیر منگل بدھ جمعرات جمعہ ہفتہ اتوار
 123456
78910111213
14151617181920
21222324252627
28293031  
%d bloggers like this: